خارش زدہ سر کی جلد کے لیے بائیوسکیب کریم کے استعمال

0

جلد پر مستقل خارش کبھی کبھی زخم کی صورت اختیار کرجاتی ہے۔ خاص طور پر خشک موسم میں جلد اور سر کی جلد میں خشکی ڈیرہ جما لیتی ہے اور پھر دماغ اندر سے سوکھنے لگتا ہے اور طبیعت میں چڑچڑاہٹ پیدا ہوجاتی ہے۔ طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ ہماری خوراک میں کچھ غذائیں ایسی ہیں جس کی وجہ سے جلد کے اندر خشکی جنم لینا شروع کردیتی ہے خاص طور پر سر کے بالوں میں خشکی کا علاج (dandruff) اکثر لوگ اچھے شیمپو سے کر کے وقتی طور پر چھٹکارہ حاصل کر لیتے ہیں جو اس کا مکمل علاج نہیں ہے۔

طبی ماہرین کی جدید رپورٹ میں یہ بات بھی ثابت کردی گئی ہے کہ اکثر خواتین یہ سمجھتی ہیں کہ اگر جلد پر خشکی (dry skin) ہے تو اس پر چکنی دوا، لوشن یا کچھ اور لگا کر اس خشکی کو چکنائی میں بدلا جاسکتا ہے ایسا ہر گز نہیں ہے۔ جلد کی خشکی کی بے شمار وجوہات ہوسکتی ہیں اور ہر وجہ کا علاج چکنی کریم اور لوشن نہیں ہوسکتا۔ کھانوں میں وٹامنز کی کمی اور زیادتی بھی اکثر جلد کو خشک کرنے کا سبب بنتی ہے۔

وہ لوگ جو زیادہ وقت دھوپ میں گزارتے ہیں یا پھر موسم سرما میں تیز گرم پانی سے ہاتھ منہ دھونے اور نہانے کے قائل ہیں ان کو بھی جلد کی خشکی اور روکھے پن کا سامنا رہا ہے۔ جلداور سر کی جلد کی خشکی (itchy scalp) کا بہترین حل تو جلد کے ماہرین کے پاس ہی موجود ہوتا ہے لیکن کچھ ٹوٹکے اور نسخے ایسے بھی ہیں جن کی مدد سے اس مشکل سے وقتی طور پر جان چھڑائی جاسکتی ہے۔

جلد کو چکنا رکھنے اور خاص طور پر سر کی جلد کو خشکی سے نجات دلانے کے لیے بہت قیمتی قیمتی ادویات، لوشن اور کریمز دسیتاب ہیں انھی کریمز میں بائیوسکیب کریم بھی خشکی کے خاتمے کے حوالے سے خاص اہمیت کی حامل ہے۔

بائیوسکیب کریم : (bioscab cream)

خارش زدہ جلد خاص طور پر سر کی جلد کے لیے بائیوسکیب اس کا استعمال نہایت مفید ہے۔
جلد کی خشکی کو ختم کرتی ہے اور نرم و ملائم بناتی ہے۔
خشکی اور خارش کی وجہ سے جلد پر بار بار کھجانے سے پڑ جانے والے سرخ نشانوں کا خاتمہ کرتی ہے۔
جلی ہوئی جلد اور اس سے پڑ جانے والے کالے نشان کو بائیوسکیب کریم کے استعمال سے ختم کیا جاسکتا ہے۔
بچے کی پیدائش کے بعد پیٹ پر ٹانکوں میں خارش اور زخم ہوجانے کی صورت میں بائیوسکیب کریم نہایت مفید ہے۔
بائیوسکیب کریم کم قیمت میں باآسانی مارکیٹس میں دستیاب ہے۔
جلد کے حوالے سے تمام منفی اثرات سے پاک بائیوسکیب کریم ڈاکٹرز بھی جلد کے امراض میں تجویز کرتے ہیں۔

بائیوسکیب کریم کے استعمال میں احتیاط : (pre-cautions for bioscab cream)

بہت ہی کم کیسز میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ بائیوسکپ کریم کا ڈاکٹر یا ڈرما ٹولوجسٹ کے مشورے کے بغیر ضرورت سے زیادہ استعمال کرنے کی صورت میں دل کے امراض کا خطرہ بڑھ سکتا ہے۔
اسی طرح اگر اس کو بے دریغ استعمال کیا جائے تو جگر پر بھی اس کے منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں ۔
ایسی خواتین جو کسی نئے وجود کو جنم دینے کے مراحل سے گزر رہی ہیں ان کو بائیوسکیب کریم کے استعمال سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ ضرور کرنا چاہیے۔
وہ خواتین جو اپنے بچوں کو دودھ پلاتی ہیں ان کو بائیوسکیب کریم کے استعمال کے دوران احتیاط کی ضرورت ہوتی ہے انھیں چاہیے کہ وہ اپنے ڈاکٹر کے مشورے کے بعد اس کا استعمال شروع کریں۔
بائیوسکب کریم کے استعمال کے دوران آنکھوں اور ناک کو اس سے بچا کر رکھیں۔
جلد پر الرجی ہونے کی صورت میں بائیوسکیب کریم کا استعمال فوراً ترک کردیں۔