راتوں رات ایکنی سے چھٹکارا پائیں

0

حسن جب اپنے جوبن پر پہنچنے کے قریب ہوتا ہے یعنی جوانی سے نوجوانی کے دوران کا وقت ایسے میں انسانی جسم میں کچھ ایسی تبدیلیاں رونما ہوتی ہیں جو سارے وجود کو متاثر کرتی ہیں۔

کیل ، مہاسے، دانے، داغ، دھبے اور ایکنی، وہ کھلتے ہوئے شباب کی وہ علامتیں ہیں جو جسم اور چہرے پر ظاہر ہو کر عمر کے آگے بڑھنے کا اعلان کرتی ہیں، لیکن چہرے کو بدنما بھی بناتی ہیں اور اگر ایسے میں کچھ بے احتیاطی ہوجائے تو چہرے پر نشانات کے ایسے تحفے ملتے ہیں جو زندگی بھر ساتھ رہتے ہیں۔

جوانی میں جلد کی بیماریوں میں ایکنی (acne) خاص طور پر قابل ذکر ہے۔ چہرے پر ایکنی ظاہر ہونے سے اس کے اندر سے رطوبت خارج ہوتی ہے۔ ایکنی کے دانوں کو دبانے سےسفیدکیل باہر نکلتی ہے، جس کو اگر ہاتھ لگایا جائے تو یہ مزید پھیل کر چہرے کو بدنما بنا دیتی ہے۔

ایکنی بالغ ہونے پر جسم کے اندر پیدا ہونے والی ایک تبدیلی ہے ، جس سے پریشان ہونے کی کوئی ضرورت نہیں۔ یہ عمر کے ساتھ ساتھ خود بخود ختم ہوجاتی ہے ، لیکن اگر اس سے ساتھ چھیڑ خانی کی جائے تو پھر یہ اپنا بھرپور رنگ دکھاتی ہے۔

ایکنی کی وجوہات : (causes of acne)

٭ کھانے میں گرم غذائوں کا استعمال۔
٭ چہرے کی صفائی کے لیے استعمال کیا جانے والاغیر معیاری فیس واش۔
٭ باہر کے مرغن اور مرچ مسالوں سے بھرے کھانے۔
٭ کسی کا استعمال کیا ہوا تولیہ دوبارہ یا پھر بار بار استعمال کرنے سے ایکنی چہرے پر ظاہر ہوتی ہے۔
٭ بہت زیادہ ڈرائی فروٹ کا استعمال بھی ایکنی کا سبب بنتے ہیں۔
٭ جلد کی مناسبت سے ہٹ کر میک اپ پروڈکٹ کا استعمال۔
٭ دن بھر میں کم سے کم پانی پینا۔
٭ نیند کے معاملے میں چوری بھی ایکنی کے نکلنے کا ذریعہ ہے۔
٭ گھی ، مکھن ، انڈے،چائے ، تمباکو اور اونی کپڑے ایکنی میں اضافہ کرتے ہیں۔
٭ خواتین میں ہارمونز کی تبدیلی، غیر متوازن ہونا، دوران حمل، ماہواری اور پیریڈ کا بند ہونا بھی ایکنی کا سبب بنتا ہے۔
٭ چہرہ دھونے کے دوران جلد کو بار بار اور زور سے رگڑنا بھی ایکنی کا باعث ہے۔

ایکنی میں احتیاط : (careful in acne)

٭ ایکنی والے چہرے پر کسی قسم کی کریم یا لوشن نہ لگائیں اس سے ایکنی مزید پھل جاتی ہے۔
٭ ایکنی کے دانوں کو ناخن سے کھرچنے سے پرہیز کریں اس عمل سے چہرے پر ایکنی کے گہرے نشانات رہ جاتے ہیں جو بڑھتی عمر کے ساتھ بھی کم نہیں ہوتے ۔
٭ ایکنی ظاہر ہونے کی صورت میں ایسے صابن سے منہ دھوئیں جو جلد کو زیادہ خشک نہ کرے۔
٭ کوشش کریں فیس واش استعمال کریں اور وہ بھی کسی معیاری کمپنی کا تاکہ جلد پر رگڑ کے نشان واضح نہ ہوں۔
٭ خاص طور پر گرمیوں کے موسم میں گرد، دھوئیں اور پسینے سے جلد کو بچائیں تاکہ ایکنی سے بچا جاسکے۔
٭ تیز دھوپ میں سفر کرنے سے گریز کریں ۔

ایکنی سے فوری نجات کے لیے : (get rid of acne overnight)

وٹامن ڈی : (vitamin d)

ایکنی کے خاتمے کے لیے وٹامن ڈی بہت اہم سمجھا جاتا ہے، کوشش کریں کہ کھانے میں ایسی غذائوں کا انتخاب کریں جس سےجسم کو وٹامن ڈی بھرپورطریقے سے حاصل ہوسکے۔ سردیوں کے موسم میں کچھ دیر دھوپ میں بیٹھ کر بھی وٹامن حاصل کیا جاسکتا ہے یہ ایک بہت ہی آسان اور سستا ذریعہ ہے ، اس سے ایکنی کے خاتمے کے امکانات مزید بڑھ جاتے ہیں۔

پھل، سبزی اور سلاد : (fruit, vagitable and salad)

چہرے پر نکلنے والی ایکنی سے نجات حاصل کرنی ہے تو پھلوں، سبزیوں اور سلاد پر اپنی توجہ مرکوز کرلیں۔ خاص طور پر جسم سے وٹامن اے کی کمی کو پورا کرنے کے لیے گاجر، چقندر، سبزیاں اور پھل میں آڑو ضرور کھائیں اس سے جلد بھی توانا ہوگی اور ایکنی بھی دور بھاگ جائے گی۔

چہرے کی صفائی : (face cleansing)

ایکنی کی صورت میں کم سے کم دن میں دو مرتبہ کسی اچھے صابن یا معیاری فیس واش سے چہرے کو دھوئیں، تولیے سے زور زور سے رگڑنے کی بجائے آہستہ آہستہ پانی خشک کریں اور اپنا استعمال کیا ہوا تولیہ یا صابن کسی دوسرے کو استعمال کرنے کے لیے ہرگز نہ دیں۔

ناریل : (coconut)

ایکنی سے فوری نجات کے لیے ناریل کی چھال، اس کا پانی، اس کا گودا ، اس کا تیل یہاں تک کہ اس کی لکڑی بھی خوبیوں اور اہمیت کی حامل ہے۔ناریل کے پانی میں پروٹین اور وٹامن بی کمپاؤنڈٖ موجود ہوتا ہے ۔انسانی جلد کے لیے ناریل بے شمار خوبیوں سے بھرا ہوا ہے۔ ناریل کا استعمال چہرے پر ظاہر ہونے والی ایکنی کے خاتمے کے لیے موثر ہے۔

ٹماٹر کا جوس : (tomato juice)

جلد پر سے ایکنی یا ایکنی کے اثرات غائب کرنے کے لیے ٹماٹر کا جوس اور شہد کو آپس میں ملا کر اس کا پیسٹ بنالیں۔پورے چہرے پر آنکھوں کے اطراف جگہ چھوڑ کر اس کو لگائیں۔کچھ دیر لگا رہنے کے بعد اسے نیم گرم پانی سے صاف کرلیں۔اگر ضرورت محسوس کریں تو اس پر ٹھنڈے پانی کے چھینٹے ماریں، اس سے جلد بھی صاف ہوجائے گی اور ایکنی کا بھی خاتمہ ہوجائے گا۔

خشخاش : (poppy) 

عین جوانی میں چہرے پر ظاہرہ ہونے والی ایکنی یا اس کے نشان صاف کرنا ہوں تو اس کے لیےخشخاش کو باریک پیس کر دودھ میں ملایا جائے اور اس کا پیسٹ بنا کر جلد پر دانوں، دھبوں اور ایکنی پر لگایا جائے تو جلد صاف اور شفاف ہوجاتی ہے۔اس کے علاوہ جلد میں خوبصورتی بھی پیدا ہوتی ہے۔

بیسن : (basin)

بیسن کو حسن کی دلکشی اور رعنائی کے لیے بہت اہم سمجھا جاتا ہے، بیسن کا استعمال قدیم زمانے سے خواتین کے حسن کو نکھارنے میں اہم رہا ہے، جلد پر ایکنی ظاہر ہونے یا ایکنی کے بعد دانوں کے نشانات کو ختم کرنے کے لیےبیسن میں کھیرے کا رس ملا کر اس کا پیسٹ چہرے پر لگایا جائے تو ایکنی اور پمپلز دور بھاگ جاتے ہیں اور جلد مزید شاداب ہوجاتی ہے۔