کیا گھونگا فیشل حقیقت ہے؟

0

خود کو حسین بنانے کے لیے انسان کیا کیا پاپڑ بیلتا ہے، خاص طور پر خواتین تو اپنی دلکشی اور عنائی کے لیے کبھی کبھی ایسے کام بھی کر جاتی ہیں کہ عقل دنگ رہ جاتی ہے۔ دنیا بھر کی ماہر بیوٹیشنز کے پاس حسن کو نکھارنے کے ایسے ایسے گُر ہیں کہ سوچ کی حد بھی وہاں تک نہیں پہنچ سکتی۔

خواتین کا حسین نظر آنا دنیا بھر میں اچھاسمجھا جاتا ہے اور شایدہی کوئی ایسا ہو جو عورت کے حسن سے متاثر نہ ہوتا ہو، جاپان نے خواتین کو حسین بنانے کا جو طریقہ متعارف کروایا ہے وہ واقعی حیرت انگیز ہونے کے ساتھ ساتھ کچھ خوف زدہ کرنے والا بھی ہے۔ اور وہ طریقہ ہے سمندری گھونگھوں سے چہرے کا فیشل۔

گھونگھوں کے فیشل کی حقیقت اور طریقہ:
(reality and ways of slug facials)

گھونگھوں کا فیشل جاپان میں متعارف کروایا گیا ہے ، اس کا طریقہ کچھ یوں ہے کہ جس کے چہرے پر گھونگھوں کا فیشل کرنا ہے پہلے اس کے چہرے کو صاف پانی سے دھویا جاتا ہے۔ پھر ایک خالی ا ور پُرسکون کمرے میں جہاں روشنی زیادہ نہ ہو وہاں اس کو لٹایا جاتا ہے، اس کے بعد اس کے چہرے پر چار سے پانچ گھونگھے چھوڑ دیے جاتے ہیں، یہ ایک کراہت سے بھرا ہوا عمل ہوتا ہے لیکن ماہرین کا کہنا ہے کہ چہرے سے گھونگھے پھسلتے ہیں اور اس دوران ان کے جسم سے ایک ایسا مادہ خارج ہوتا ہے جو چہرے کی جلد کو حسین اور خوبصورت بناتا ہے ، یہ مادہ چہرے پر بڑھاپے کے اثرات کو کم کرتا ہے اور جلد کو حسین، نرم و ملائم اور جوان بناتا ہے۔

گھونگھوں سے نکلنے والا مادہ

گھونگوں میں ایک ایسا لیس دار مادہ پایا جاتا ہے جو چہرے کی خوبصورتی اور چہرے کو نرم و ملائم بنانے والی مہنگی ترین کریمز میں استعمال کیا جاتا ہے، یہ کریمز میں پائی جانے والی کولیجن اور ایلاسٹن نامی اجزا کو متحرک رکھتا ہے اور چہرے کی دلکشی کا بہترین سبب بھی ہے۔

گھونگھوں کے فیشل کے فوائد

گھونگھوں کے فیشل سے چہرے کی جلد جھریوں کا شکار ہونے سے بچ جاتی ہے۔
گھونگھوں کے فیشل سے جلد کا روکھا پن ختم ہوتا ہے اور جلد نرم و ملائم ہوجاتی ہے۔
وقت سے پہلے بڑھاپے کے اثرات گھونگھوں کے فیشل سے بہت حد تک کم ہوجاتے ہیں۔
گھونگھوں کے فیشل سے چہرہ گلاب کی طرح کھل اٹھتا ہے اور تازگی حسن کو مزید بڑھا دیتی ہے۔

گھونگھوں کے فیشل کی قیمت

گھونگھوں سے کیے جانے والا فیشل اتنا زیادہ مہنگا ہوتا ہے کہ ہر کوئی اس فیشل سے فائدہ اٹھانے کی طاقت نہیں رکھتا، اداکارائیں، امیر اور صاحب ثروت افراد ہی اس سے فیض یاب ہوتے ہیں، فیشل کے دوران خواتین کو صبر کے ایک عجیب امتحان سے گزرنا پڑتا ہے۔ تب کہیں جا کے ان کے حسن کو چار چاند لگتے ہیں۔

گھونگھوں کے فیشل کا دورانیہ

یہ مہنگا ترین فیشل تقریباً ایک گھنٹے تک کیا جاتا ہے اس کے بعد چہرے کو صاف پانی سے دھویا جاتا ہے، جو گھونگھے فیشل میں استعمال کیے جاتے ہیں انھیں اچھی خوراک مہیا کی جاتی ہے، جن میں گاجر، پالک اور تازہ سبزیاں کھلائی جاتی ہیں۔

فیشل میں گھونگھوں کی تعداد اور احتیاط

گھونگھوں کے فیشل میں چہرے پر چھوڑنے کے لیے کم سے کم پانچ گھونگھے منتخب کیے جاتے ہیں جو کم سے کم پانچ سے سات منٹ تک چہرے پر گھومتے ہیں، اس دوران بیوٹیشن اس بات کا خاص خیال رکھتے ہیں کہ گھونگھے چلتے ہوئے کہیں ناک، آنکھ یا منہ کی طرف نہ جائیں، اس سے انسانی صحت کے لیے خطرہ ہوتا ہے۔گھونگھے اگر ان جگہوں پر آنے کی کوشش کرتے ہیں تو باقاعدہ طور پر ان کا رخ موڑ دیا جاتا ہے۔یہ کام بہت احتیاط کے ساتھ کیا جاتا ہے۔