بالوں سے جوئیں کیسے ختم کی جائیں

0

بال کتنے ہی حسین اور خوبصورت ہوں لیکن اگر ان پر چلتی ہوئی جوئیں نظرآجائیں تو سوائے شرمندگی کے اور کچھ نہیں ہوتا، لیکن جس کے سر میں یہ جوئیں اپنا بسیرا کرلیتی ہیں وہ سر پھر کام کا نہیں رہتا۔  سر کے بالوں میں جوئوں کی بہت سی وجوہات ہوتی ہیں، جن کی وجہ سے جوئیں سر میں خود کو محفوط محسوس کرتی ہیں اور وہاں سے باہر نکلنے کا نام ہی نہیں لیتیں۔

جوئوں کی موجودگی بچوں کے سر میں زیادہ پائی جاتی ہے، بچے اسکول میں اپنا وقت زیادہ گزارتے ہیں اور ہر طرح کے بچوں کے ساتھ ان کا وقت گزرتا ہے یہی وجہ ہے کہ اسکول جانے والے بچے اس کا زیادہ شکار ہوتے ہیں۔

جوئیں سر میں غار بھی بنالیتی ہیں ، خون چوستی ہیں جس سے دماغ اور صحت کمزور ہونے کے علاوہ بال بھی کمزور ہوجاتے ہیں، بچے ہوں یا بڑے سر کی جوئیں سب کی طبیعت میں چڑ چڑاہٹ پیدا کردیتی ہیں۔

اس جدید دور میں میڈیکل سائنس نے جوئوں کے خاتمے کے لیے صابن، شیمپو اور مختلف قسم کے آئل تیار کیے ہیں جو بازاروں میں عام دسیتاب بھی ہیں لیکن ان کی قیمت عام آدمی کی خرید سے باہر ہے۔ ایک جدید تحقیق کے مطابق ایک جوں سر میں 30 دن تک زندہ رہ سکتی ہے اور سر کے بالوں سے باہر آکر کم سے کم 3 دن تک زندہ رہتی ہے۔جوئیں سر میں انڈے دیتی ہیں اور پھر اس سے مزید بڑھنے لگتی ہیں۔

سب سے پہلے یہ جاننے کی ضرورت ہے کہ آیا بڑوں اور بچوں کے سر میں جوئوں کی کیا وجوہات ہوتی ہیں، وہ کیا عوامل ہیں جن سے بالوں میں جوئیں اپنا گھر بنالیتی ہیں اور سر پھر ان سے نجات حاصل کرنا مشکل ترین کام بن جاتا ہے۔

سر کے بالوں میں جوئوں کی وجوہات :
(cause of lice in your hair)

٭ سر جتنا زیادہ گندا ہوگا جوئیں اس میں اتنی ہی جلدی اپنا ڈھیرہ ڈال لیں گی۔
٭ ایک دوسرے کی کنگھی یا برش استعمال کرنے سے بھی سر کے بالوں میں جوئیں پیدا ہونے لگتی ہیں۔
٭ سر میں مسلسل پسینہ آنے سے پسینہ جذب ہونے لگتا ہے اور جوئیں یہیں سے جنم لینا شروع کردیتی ہیں۔
٭ کچھ خواتین خود بھی اور اپنے بچوں کو نہلانے کی چور ہوتی ہیں، نتیجے میں سر میں گرد و غبار جمنا شروع ہوجاتی ہے، پسینے بھی آنے لگتا ہے اور یہ سب جوئوں کا سبب بنتے ہیں۔
٭ کھارے پانی سے سر کو دھونے سے بھی جوئیں جنم لیتی ہیں ۔

یہ بھی پڑھیں۔ میتھی کے پتے بالوں کا جھڑنا ختم کرتے ہیں

سر کے بالوں سے جوئوں کا خاتمہ

٭ اگر سر میں جوئیں ہیں تو سب سے پہلے ایک مرتبہ جلد کے ماہر ڈاکٹر سے رجوع کریں۔
٭ ڈاکٹر کے بتائے ہوئے مشورے کے مطابق ادویات، شیمپو اور لوشن کا استعمال کریں۔
٭ سر کو ہمیشہ صاف ستھرا رکھیں اور پسینے سے سر کے بالوں کو بچائیں۔
٭ اگر کسی کے سر میں جوئیں ہیں تو اس کا تولیہ اور تکیہ استعمال کرنے سے گریز کریں۔
٭ نہاتے ہوئے شیمپو استعمال کرنے سے پہلے بالوں کو اچھی طرح گیلا ضرور کریں، خشک بالوں میں شیمپو لگانے سے جوئوں کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔
٭ نہانے کے بعد گیلے بالوں میں بار بار کنگھی کریں اور جوئوں کو نکال کر سر کو صاف کرنے کی کوشش کریں۔
٭ جوئوں سے نجات حاصل کرنے کے لیے ہفتے میں تین سے چار مرتبہ ناریل اور زیتون کے تیل کی اچھی طرح مالش کریں
٭ مایونیز، زیتون کا تیل اور پٹرولیم جیلی ہم وزن ملا کر جڑوں پر لگائیں اور آدھے گھنٹے بعد دھو لیں۔جوؤں کے ساتھ ساتھ جوؤں سے ہونے والی خارش اور بے چینی سے بھی نجات مل جائے گی۔
٭ جوئوں کے خاتمے کے لیےٹی ٹری آئل ،تارا میرا اور لونگ کا تیل بھی مفید ہے ۔
٭ پسی کالی مرچ میں تیل ملا کر سر پر مساج کریں۔مساج کے پندرہ منٹ بعد کنگھی کریں، ساری جوئیں سر سے باہر نکل آئیں گی۔