پٹھوں میں کھنچائو اور درد سے پروکسیکم جیل دلائے نجات

0

پٹھوں میں کھچائو کی بے شمار وجوہات ہوسکتی ہیں، کچھ لوگ اندر سے کمزور ہوتے ہیں جس کی وجہ سے ان کے عضلات بھی کمزور پڑجاتے ہیں اور موسم کی تبدیلی خاص طور پر سردیوں کے موسم میں انھیں پٹھوں میں کھچائو کے درد کا سامنا رہتا ہے۔ پٹھوں میں کھچائو کی ایک وجہ بہت زیادہ وزن کااٹھانا بھی ہے، اس سے پٹھوں کے عضلات سکڑ جاتے ہیں اور نتیجے میں متاثرہ جگہ کے علاوہ سارے جسم میں درد محسوس ہوتا ہے۔

یہ بھی پڑھیں۔ سردیوں کے لئے آسان گھریلو ایکسرسائزز ٹپس

پٹھوں کے کچھائو کی وجہ سے بعض اوقات تکلیف کی شدت میں اضافہ ہوجاتا ہے ، ٹانگوں ، ہاتھوں، پیروں اور جسم کو حرکت دینا بھی مشکل ہوجاتا ہے، نیتجے میں ڈاکٹر انجیکشن کا سہارا لے کر درد کا علاج تلاش کرتے ہیں۔ کمر کا درد انسان کو ایک پل چین سے نہیں بیٹھنے دیتا اور اس کمر کے درد کی اکثر وجہ بھی پٹھوں کا کھچائو ہی ہوتی ہے، کمر بھی حرکت کرنے سے قاصر ہوجاتی ہے اور انسان تکلیف کی شدت سے کراہنے لگتا ہے۔

پٹھوں کے کھچائو کی وجوہات : (cause of stiff muscle)

stiff muscle
stiff muscle

٭ سرد موسم میں پنکھے کی تیز ہوا یا کھلی فضا میں سونے سے پٹھوں میں کھچائو پیدا ہوتا ہے۔
٭ اپنی طاقت سے زیادہ وزن اٹھانے سے پٹھوں کے عضلات کھچ جاتے ہیں اور درد بڑھ جاتا ہے۔
٭ سونے کے دوران کسی ایک کروٹ سے مسلسل سوتے رہنے سے بھی صبح اٹھ کر پٹھوں میں کچھائو پیدا ہوجاتا ہے۔
٭ ناقص خوراک جسم کو کمزور کرتی ہے اور کمزور جسم پر پٹھوں کا کھچائو زیادہ ہوتا ہے۔
٭ تحقیق سے یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ وہ افراد جو نشہ آور ادویات کا استعمال کرتے ہیں ان کو پٹھوں کے کچھائو کا زیادہ سامنا رہتاہے۔
٭پٹھوں کے کھچائو کی صورت میں سب سے پہلے تو ماہر ڈاکٹر سے رجوع کریں اور اس کے مشورے اور تجویز کردہ ادویات کاا ستعمال کریں۔
٭کمر درد اور پٹھوں میں کھچائو کو دور کرنے کے لیے بے شمار کریمز اور لوشنز اور جیل بازاروں میں دسیتاب ہیں انھی میں پیروکسکیم جیل پٹھوں کے کھچائو میں مفید ثابت ہوتا ہے۔

جانیے: ذہنی صحت جسمانی صحت کی طرح اہم ہے

پیروکسیکم جیل : (piroxicam gel)

٭ پیروکسیکم جیل یہ دوائوں کی ایک ایسی قسم ہے جو جلد اور پٹھوں کی سوزش کے خلاف لڑنے کی طاقت رکھتا ہے۔
٭ پیروکسیکم جیل جلد اور پٹھوں کی سوزش کا خاتمہ کرتا ہے، پٹھوں کے درد کو کھینچتا ہے۔
٭ پٹھوں کی سختی کو نارمل بناتا ہے اور پٹھوں کو گرمائی پہنچاتا ہے۔
٭ جلد کی حساسیت اور نزاکت کے مد نظر رکھتے ہوئے یہ جیل تیار کیا گیا ہے۔
٭ یہ درد اور سوزش کی علامات کو دور کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے
٭ جن میں گرمی، سوجن اور جلد پر ظاہر ہونے والی سرخی کو دور کرتا ہے۔
٭ البتہ جلد کے اندر موجود بنیادی ٹشوز کے علاج کے لیے یہ موزوں نہیں ہے۔
٭ پروکسیکم جیل کو ہلکے ہاتھوں سے متاثرہ جگہ پر لگانا چاہیے، اس کو زیادہ رگڑنے سے جلد کو نقصان کا خطرہ ہوتا ہے۔

پیروکسیکم کا استعمال اور احتیاط : (uses of piroxicam)

٭ خواتین کو ماہانہ ہونے والے درد، سرجری یا بچے کے پیدائش کے بعد پٹھوں کے کچھائو کو دور کرنے کے لیے پیروکسیکم جیل استعمال کیا جاسکتا ہے۔
٭ پیروکسیکم جیل جلد میں جذب ہو کر ایسے مادوں کو روکتا ہے جو پٹھوں کے کھچائو اور جلد کی سوزش کا سبب بنتے ہیں۔
٭ پٹھوں اور متاثر جگہ پر پیروکسیکم جیل دن میں تین سے چار مرتبہ لگا کر مساج کرنے سے درد ختم ہوجاتا ہے۔
٭ جلد کی متاثرہ جگہ پر پیروکسیکم کا آہستہ آہستہ مساج کریں ۔
٭ جیل لگانے کے بعد ہاتھوں کو اچھی طرح صاف کریں۔
٭ پروکسیکم جیل کم سے کم سات دن کے اندر پٹھوں اور عضلات کے درد کو کھینچ لیتا ہے۔
٭ اگر پٹھوں میں کھچائوزیادہ ہے تو دو ہفتے لگا تار اس کا استعمال کریں، تاکہ درد کی شدت میں کمی محسوس ہو۔
٭ بعض اوقات پروکسیکم جیل کا استعمال کئی ہفتوں پر چلا جاتا ہے ، جو درد کی شدت پر منحصر ہوتا ہے۔