آپکو گرمیوں میں کتنا پانی پینا چاہیے؟

0

ہر موسم کا اپنا مزاج ہوتا ہے اور انسانی طبیعت پر یہ مزاج الگ ہی اثرات مرتب کرتا ہے۔ جس طرح موسم سرما اور موسم گرما اپنی ایک منفرد شناخت رکھتے ہیں، انسان کی طبیعت پر کبھی کبھی گراں بھی گزرتے ہیں لیکن انھی موسموں کا سامنا کرتے ہوئے زندگی کا سفر طے ہوتا ہے اور ہوتا آرہا ہے۔

جیسے جیسے موسم تبدیل ہوتا ہے ، کھانے پینے اور پہننے اوڑھنے میں بھی تبدیلی واقع ہوتی ہے۔ سرد موسم میں جس طرح بھوک بڑھ جاتی ہے، خشک میوہ جات اور گرم غذائیں کھا کر لطف محسوس ہوتا ہے، اسی طرح گرمیوں کے موسم میں ہلکی پھلکی غذا اور پانی کا زیادہ استعمال بڑھ جاتا ہے جو صحت کے لیے ضروری ہے۔

پانی اللہ تعالیٰ کی ایسی نعمت ہے جس کو ئی نعم البدل ہے ہی نہیں۔ یہ انسان کی صحت کے لیے اتنا ضروری ہے کہ آج تک کوئی تحقیق اس کو رد نہیں کرسکی۔ انسانی جسم میں جتنا زیادہ پانی موجود ہوگا صحت اتنی ہی اچھی ہوگی۔

موسم گرما میں پانی کی اہمیت:(water importance in summer)

انسانی جسم ایک سسٹم کے تحت کام کرتا ہے، اس میں کسی بھی چیز کی کمی فوری طور پر الارم بجاتی ہے اور صحت کو متاثر کرتی ہے۔ ان تمام باتوں کے ساتھ پانی وہ ہے جو زندگی کی علامت سمجھا جاتا ہے۔
طبی تحقیق کے مطابق ایک نارمل انسان کو دن بھر میں 8 سے 12 گلاس پانی ضرور پینا چاہیے، اس سےاس کا نظام ہاضمہ کنٹرول رہتا ہے ۔ گردے کی بیماریوں ختم ہوتی ہیں اور سب سے اچھی بات یہ کہ جلد کو تقویت ملتی ہے۔
انسان کی اچھی صحت کا راز زیادہ پانی کا پینا ہے۔خاص طور پر گرمیوں کے موسم میں پانی کے زیادہ پینے کی اہم وجہ یہ ہے کہ اس سے جلد کو نمی حاصل ہوتی ہے اور جلد خشک ہونے سے بچ جاتی ہے۔
سورج کی تیز شعاعیں جب جسم اور جلد پر اثر انداز ہوتی ہیں تو پانی کی پہلے سے جسم میں موجود مقدار اس سے لڑنے کی صلاحیت رکھتی ہے ، صحت اور جلد کو فائدہ پہنچاتی ہے۔
گرمی کے موسم میں پسینہ زیادہ بہتا ہے اور اس سے جسم کی نمکیات خارج ہونے لگتی ہے ، پانی ایسی صورت میں بہترین دوا کا کام انجام دیتا ہے۔
اکثر لوگوں کو ڈی ہائیڈریشن کا مسئلہ درپیش ہوتا ہے، اگر پانی کا زیادہ سے زیادہ استعمال کیا جائے بلکہ اگر موسم گرما میں ہر ایک گھنٹے کے بعد ایک گلاس پانی پیا جائے تو ڈی ہائیڈریشن جیسی صورت حال سے بچا جاسکتا ہے۔
پانی میںایسے اجزا شامل ہوتے ہیں جو انسانی جسم اور صحت کے لیے بہت اہم اور ضروری ہوتےہیں۔ اس لیے صاف پانی پینا صحت کو اچھا بناتا ہے اور آلودہ پانی صحت کی خرابی کا سبب بنتا ہے۔

دیگر ذرائع سے پانی کا حصول:(other sources to get water)

انسانی کی طبیعت میں یہ بات ہے کہ وہ یکسانیت سے اکتا جاتا ہے، مسلسل پانی پینے سے طبیعت میں اکتاہٹ پیدا ہوجاتی ہے ، اس کے لیے قدرت نے اور ایسی نعمتیں انسان کے لیے اتاری ہیں جن کو کھانے سے جسم میں پانی کی کمی کو پورا کیا جاسکتا ہے خاص طور پر موسم گرما میں یہ بہت مفید سمجھی جاتی ہیں۔

کھیرا:(cucumber)

یہ وہ سبزی ہے جو تقریبا ً بارہ مہینے بآاسانی دستیاب ہوتی ہے اس میں 80 فیصد پانی کی مقدار پائی جاتی ہے جس کے استعمال سے جسم میں پانی کی کمی کو پورا کیا جاسکتا ہے۔

تربوز:(melon)

تربوز دیکھنے میں ہی اتنا اچھا لگتا ہے کہ اس کو سخت گرمی میں جب ہونٹ بھی خشک ہو رہے ہوں کھانے کو جی چاہتا ہے، تربوز میں پانی کی وافر مقدار پائی جاتی ہے ، خاص طور پر موسم گرما میں یہ خوش ذائقہ ہونے کے ساتھ ساتھ پانی کی کمی کو بھی پورا کرتا ہے۔

خربوزہ:(water melon)

یہ بھی گرمی کا وہ پھل ہے جس میں پانی کی مقدار زیادہ پائی جاتی ہے۔ پانی پینا جب طبیعت پر گراں گزرے تو ایسے میں خربوزے کا استعمال زیادہ کریں۔ خربوزہ نہ صرف جسم میں پانی کی کمی پوری کرتا ہے بلکہ جسم کی گرمی کے اخراج کا بھی بہترین ذریعہ ہے۔